2013-18 میں ہیلتھ بجٹ صرف 169ارب، ہماری حکومت نے رواں مالی سال بجٹ399ارب روپے کردیا ہے:عثمان بزدار لاہور ڈویژن میں 36ارب 65کروڑ روپے کے ہیلتھ پراجیکٹس پر کام جاری، فیروز پور روڈپر ایک ہزار بستروں کا ہسپتال تعمیر کیا جائے گا گنگارام ہسپتال میں سٹیٹ آف

120

With the compliments of the
Directorate General Public Relations,
Government of the Punjab, Lahore.
Ph: +92 42 99201390-1-2


لاہور14جنوری:  وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہا ہے کہ 2013-18 میں ہیلتھ کا بجٹ صرف 169ارب روپے تھا جبکہ ہماری حکومت نے رواں مالی سال میں ہیلتھ کا بجٹ 369 ارب روپے سے بڑھا کر399ارب روپے کردیا ہے۔ لاہور ڈویژن میں 36ارب 65کروڑ روپے کے ہیلتھ پراجیکٹ پر کام جاری ہے۔ گنگارام ہسپتال میں سٹیٹ آف دی آرٹ مدراینڈ چائلڈ بلاک کی تعمیرہورہی ہے جس پر7ارب روپے لاگت آئے گی۔ فیروز پور روڈپر ایک ہزار بستروں پر مشتمل ہسپتال تعمیر کیا جائے گا اور اس ہسپتال کی تعمیر پر مجموعی طور پر 8ارب روپے لاگت آئے گی۔ پہلے مرحلے میں 100بستروں پر مشتمل ہسپتال کو فنکشنل کریں گے۔ جناح ہسپتال اور سروسز ہسپتال میں ایمرجنسی اورٹراما سینٹرز بنیں گے جبکہ 4ارب روپے کی لا گت سے چائلڈ ہیلتھ سائنسز یونیورسٹی تعمیر ہوگی۔ لیڈی ولنگڈن ہسپتال کی مختلف وارڈ کی اپ گریڈیشن پرساڑھے35ارب روپے خرچ ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ سرکاری ہسپتالوں کو پیپرلیس دور میں لانے کیلئے پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے اشتراک سے ہاسپٹل مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم لایا جارہا ہے۔ ان ہیلتھ فسیلٹیز کے ذریعے شہریوں کو صحت عامہ کی بہترین سہولتیں ملیں گی۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں بڑا نشتر ہسپتال 1953ء میں بنایا گیا۔ جنوبی پنجاب کے لئے ملتان نشتر ٹو اور ڈی جی خان میں کارڈیالوجی انسٹیٹیوٹ تیزی سے تکمیل کے مراحل طے کررہا ہے۔ راولپنڈی اور بہاولپور میں ڈینٹل کالج بنائے جارہے ہیں۔ پنجاب میں مجموعی طور پر 8مدراینڈ چائلڈ ہسپتالوں پر کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ چنیوٹ، حافظ آباد اور چکوال میں نئے ڈسٹرکٹ ہسپتالوں کے ساتھ منڈی بہاؤالدین کے ڈی ایچ کیو ہسپتال کے نامکمل منصوبے کو پایہ تکمیل تک پہنچایا اور مجموعی طور پر صوبہ بھر میں  158 ہسپتالوں اور مراکزصحت کو اپ گریڈ کیا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ 3 سال میں ہم نے 78نئی ہیلتھ فسیلٹیز قائم کیں۔ ڈسٹرکٹ ڈویلپمنٹ پیکیج میں ہیلتھ کے 91نئے ترقیاتی منصوبے شامل کئے گئے ہیں۔ صوبہ بھر کے ہسپتالوں اور طبی مراکز میں مفت ادویات کے لئے مجموعی طور پرسوا  37 ارب روپے مختص کئے گئے۔  مزدور اور محنت کش طبقے کو علاج معالجے کی بہترین سہولتیں فراہم کرنے کے لئے نئے ہسپتال بنانے پر بھی توجہ دی گئی۔PESSI کے آغاز سے52 سال یعنی2018ء تک پنجاب میں 14سوشل سیکورٹی ہسپتال تھے اور ہم نے صرف تین سال میں 9نئے ہسپتال بنائے اور اب صوبہ میں 23سوشل سیکورٹی ہسپتال ہیں جہاں ہررجسٹرڈ مزدور اور محنت کش کو مفت علاج معالجے کی بہترین سہولتیں میسر ہیں۔
٭٭٭٭